الأئمة من قريش

یہ اعتراض بالکل بے معنی ہے کہ قریش پورے مسلمانوں کا صرف ایک اقلیتی گروہ تھا اس لئے قریش کے بارہ میں الأئمة من قريش کا فیصلہ صحیح نہیں تھا. اصل سوال یہ ہے کہ کیا ان کو لوگوں کی سپورٹ حاصل تھی یا نہیں؟ اگر تھی تو ان کی اپنی تعداد ذرہ برابر بھی matter نہیں کرتی.

ان کو سپورٹ حاصل تھی یا نہیں یہ فیصلہ آج بیٹھ کر نہیں کیا جا سکتا. اس کے لئے کوئی معاصر بیان ہی لانا پڑے گا. شکر ہے کہ خود احادیث میں یہ بات بیان ہو گئی ہے. حضور (ص) نے صرف یہ نہیں کہا کہ الأئمة من قريش، انہوں نے اس کی وجہ بھی بتائی ہے جو سادہ زبان میں یہ ہے کہ لوگ قریش کی پیروی کرتے ہیں، اچھے لوگ ان کے اچھے لوگوں کی، اور برے لوگ ان کے بروں کی.

اس سے واضح ہے کہ لوگوں میں قریش کی لیڈرشپ کے بارے میں کوئی ابہام نہیں تھا. عقل بھی کہتی ہے کہ ایسا ہی ہونا چاہیے. قریش کعبہ کے caretaker تھے اور کعبہ کوعربوں میں ایک مرکزی حیثیت حاصل تھی.

یہ بات کہ انصار کے ایمان لانے کے بعد قریش کی یہ پوزیشن متاثر ہوئی تھی بھی قابل التفات نہیں. اگر بات صرف مدینہ کی city state کی ہوتی تو یہ بات وزن رکھتی تھی. لیکن یہاں مسئلہ پورے عرب کا تھا. وہ قریش کے ہوتے ہوئے انصار کی قیادت میں اکٹھے کیسے ہو سکتے تھے؟

Installing Korat on Windows

While installing Korat make sure that you add an environment variable KORAT_CPand set it to

Moreover, while running Korat examples from command line use a command similar to the one below:

-noverify  is necessary otherwise you shall get the following error:

If you are using Eclipse add -noverify  to VM arguments of Debug/Run configuration.

Categories: Dev